پہلی مرتبہ دستاویزی شکل میں تحریری معاہدہ ہوا ہے، آغا رضاماضی میں کسی حکومت نےتحریری معاہدہ نہیں کیا، امید ہے اب وعدہ نہیں عملدرآمد ہوگا، سکیورٹی سیل صرف ہمارے تحفظ کیلئے نہیں بلکہ دہشتگردی کا مقابلہ کرنے کیلئے سکیورٹی فورسز کی تعداد بڑھائی جائے گی

مجلس وحدت المسلمین کے رہنماء آغا رضا نے کہا ہے کہ پہلی مرتبہ دستاویزی شکل میں یقین دہانی ہوئی ہے، امید ہے کہ ماضی کی طرح وعدے نہیں بلکہ عملدرآمد ہوگا، ماضی کی کسی حکومت نے تحریری معاہدہ کرکے اتنی سنجیدگی نہیں دکھائی، سکیورٹی سیل صرف ہمارے تحفظ کیلئے نہیں بلکہ دہشتگردی کا مقابلہ کرنے کیلئے سکیورٹی فورسز کی تعداد بڑھائی جائے گی۔انہوں نے نجی ٹی وی کے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ کچھ نہ ہونے سے کچھ کرجانا بہتر ہے، یہ بات بالکل ٹھیک ہے کہ پچھلے 22 سالوں میں ہم لاشیں اٹھا اٹھا کر تھک گئے ہیں، لیکن شنوائی نہیں ہوئی، اگر کبھی آیا بھی تو صرف یقین دہانی کروائی گئی، سوائے ایک نوٹیفکیشن کے جب بلوچستان حکومت برطرف کردی گئی تھی، اب شہداء نے جو مطالبات رکھے ان کو دیکھا گیا اور نوٹیفکیشن کی شکل میں یقین دہانی کروائی گئی، امید ہے کہ ماضی کی طرح وعدے نہیں بلکہ عملدرآمد ہوگا، شیعہ ہزارہ کمیونٹی کی اس میں نمائندگی ہوگی اس لیے چیزوں کو سمجھنے میں آسانی ہوگی۔ایسا نہیں کہ ہماری سکیورٹی کیلئے سیل بنایا جارہا ہے، سرحدی اور بلوچستان میں سکیورٹی فورسز کی تعداد بڑھائی جائے گی، تاکہ موجودہ دہشتگرد جن کی نئی شکل سامنے آئی ہے ان کو کیفرکردار تک پہنچایا جائے گا۔ ماضی کی کسی حکومت نے اتنی سنجیدگی نہیں دکھائی جتنی موجودہ حکومت نے تحریری معاہدہ کرکے دکھائی ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاسپورٹ اور شناختی کارڈ کا بتانا چاہتا ہوں کہ لوگوں کے ذہن میں ابہام ہے کہ افغانستان سے یہ اپنی دوستیاں اور دشمنیاں یہاں لے کر آئے ہیں، اگر یہاں پر لوگ ہندوستان، ایران اور افغانستان سے ہجرت کرکے آئے ہیں ان کو شناختی کارڈ نہیں دیا جانا چاہیے؟ اس طرح بہت تنگ کیا گیا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *