حکومت نے قبضہ مافیاکے خلاف گرفت سخت کرنے کے لیے عملی اقدام اٹھا لیے

اسلام آباد گزشتہ دنوں لاہور میں کھوکھر برادران کے خلاف قبضہ کا جو شور اٹھااور حکومت نے سرکاری اراضی کا قبضہ واپس لینے کے لیے جس قسم کا آپریشن کیا وہ سب کے سامنے ہے،اس ایشو کے بعد سے وزیراعظم عمران خان ڈٹ گئے کہ اب قبضہ مافیا کو رعایت نہیں دینی لہٰذا اب اسلام آباد میں بھی قبضہ مافیا کے خلاف بڑی کارروائی شروع کر دی گئی ہے۔وزیراعظم عمران خان کے حکم پر قبضہ مافیا کے خلاف بڑا کریک ڈاؤن شروع کردیا گیا، کارروائی کے دوران اسلام آباد میں سرگرم قبضہ مافیا کے5بڑے سرغنہ گرفتار کرلیے گئے۔لاہور کے بعد اسلام آباد کی ضلعی انتظامیہ نے بھی قبضہ مافیا کے خلاف کارروائی کا فیصلہ کرتے ہوئے ان گروپوں کے 80افرادکی فہرست تیار کی ہے۔قبضہ مافیا کے خلاف کریک ڈاؤن کے لیے خصوصی کمیٹی بھی تشکیل دی گئی ہے۔اس حوالے سے ذرائع کا کہنا ہے کہ جن ملزمان کو گرفتار کیا گیا ہے ان میں غوری ٹاؤن کے ملک راجہ عبدالرحمان، راجہ رضا سمیت 5اہم افراد شامل ہیں، ان بااثر شخصیات کو تھری ایم پی او کے تحت گرفتار کیا گیا ہے۔ذرائع کے مطابق گرفتارافراد کوتھری ایم پی او کے تحت90دن تک حراست میں رکھا جاسکتا ہے، اس حوالے سے 30کے قریب شخصیات کی فہرست مرتب کی گئی ہے۔قبضہ مافیا کے خلاف بڑا کریک ڈاؤن کے دوران ان کا اسلحہ اور گاڑیاں بھی ضبط کی جارہی ہیں، کریک ڈاؤن وفاقی پولیس اور ضلعی انتظامیہ کے افسران کی زیر نگرانی کیا جارہا ہے۔ ذرائع کا مزید کہنا ہے کہ رات گئے مزید اہم گرفتاریوں کا بھی امکان ظاہر کیا جارہا ہے۔ڈپٹی کمشنر اسلام آباد حمزہ شفقات کے مطابق مذکورہ کمیٹی سرکاری اراضی پر قبضے کو فوری واگزار کروا کر قانونی کارروائی عمل میں لائے گی۔قبضہ مافیا کے منظم گروہ اور ان کے سہولت کاروں کے خلاف قانونی کارروائی عمل میں لا کر انہیں عوام کے سامنے بے نقاب کیا جائے گا۔یاد رہے کہ قبضہ مافیاکے خلاف وزیراعظم عمران خان نے سخت موقف اپناتے ہوئے انہیں کسی بھی کسم کی رعایت نہ دینے کا کہا ہوا ہے اور سرکاری اراضی کے علاوہ غریب لوگوں کی ہتھیائی ہوئی زمین بھی واگزار کرانے کی ہدایت کر رکھی ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *